Nasir Kazmi Kay Kuch Muntakhib Asha'r

وہ رات کا بے نوا مسافر وہ تیرا شاعر وہ تیرا ناصر

تری گلی تک تو ہم نے دیکھا پھر نہ جانے کدھر گیا وہ

Nasir kia kehta pherta,kuch na suno tou behtar hai!
deewana hai,deewanay kay,moun na lago tou behtar hai!

ناصر سے کہے کون کہ اللہ کے بندے
باقی ہے ابھی رات ذرا آنکھ جھپک لے

جدا ہوئے ہیں بہت لوگ ایک تم بھی سہی
اب اتنی بات پہ کیا زندگی حرام کریں

judaaion k zakhm , dard zindagi ne bhar diye ..
usy bhi neend aa gai , mujhe bhi sabr aa gaya ..

وصال یار کیا خیرات ہے جو مانگ لوں تُم سے
مرا حق ہے، ادا کرنے کی سوچو، تو بتا دینا

ہے اظہرعشق کا روگی، کرو چارہ گرو کچھ تو
مریضوں کی دوا کرنے کی سوچو، تو بتا دینا